IQNA

6:37 - December 19, 2020
خبر کا کوڈ: 3508647
وزیراعظم عمرا ن خان کا کہنا ہے کہ ہم اسرائیل کوتسلیم ہی نہیں کرسکتے تو وہاں کوئی کیوں جائےگا؟ ہمارے وزیر نے وہاں جاکر کیا کرنا ہے؟

اپنے بیان میں وزیراعظم نے کہا کہ یہ بالکل غلط خبر ہے، پوری مہم چل رہی ہے، یورپی یونین کے ڈس انفولیب نے بھارت کےنیٹ ورک کوبےنقاب کیا، ہمارےلوگ ملے ہوئے ہیں، یہاں بیٹھے لوگ اس میں فیڈ کر رہے ہیں۔

وزیرِ اعظم عمران خان کی زیرِ صدارت معاشی ٹیم کا اجلاس ہوا جس کا اعلامیہ جاری کردیا گیا ہے۔

اعلامیے کے مطابق اجلاس میں وفاقی وزراء مخدوم خسرو بختیار، ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ، حماد اظہر، اسد عمر، عبدالرزاق داؤد،ڈاکٹرعشرت حسین،گورنراسٹیٹ بینک رضاباقر، وقار مسعود، وزیرِخزانہ خیبرپختونخوا تیمورسلیم جھگڑا،وزیرِخزانہ پنجاب ہاشم جواں بخت و دیگر نے شرکت کی۔

اجلاس میں وزیرِاعظم کو ملکی معیشت کے بہتر ہوتے ہوئے اشاریوں کے بارے آگاہ کیا گیا۔

وزیرِاعظم نےصنعت، تعمیراتی شعبے میں بہتری اورٹیکسٹائل سیکٹرسےبرآمدات میں اضافہ پراطمینان کااظہارکیا،وزیرِاعظم نےبیرونِ ملک سےترسیلاتِ زرمیں اضافےاور ان کا 2 ارب ڈالر ماہانہ کی سطح پربرقراررہناخوش آئند قراردیا۔

وزیرِاعظم نےمعاشی اشاریوں کی بہتری کےثمرات عام آدمی تک پہنچانےکیلئےفوری اوردیرپااقدامات پر زور دیا اور کہا کہ حکومت کی کاروباردوست پالیسیاں اسٹاک مارکیٹ میں تیزی،سرمایہ داروں کےاعتمادمیں اضافےکی وجہ ہیں، دنیابھر میں پاکستان کی مشکل ترین وقت میں معاشی کارکردگی کی پذیرائی ہورہی ہے، پاکستانی کی پذیرائی کا سہرا معاشی ٹیم کو جاتا ہے، خداکاشکرہےکہ ملک مشکل وقت سےنکل آیاہے۔

قابل ذکر ہے کہ مختلف میڈیا پر ایک بڑے اسلامی ملک کے وزیر کے دورہ اسرائیل کی خبریں چل رہی ہیں جس کو خیال کیا جاتا ہے کہ وہ پاکستانی وزیر ہوگا تاہم وزیراعظم نے خبروں کو مکمل طور پر پروپیگنڈہ قرار دیا ۔/

237791

نام:
ایمیل:
* رایے:
* captcha: