IQNA

آلٹ نیوزکےشریک بانی محمد زبیر پولیس ریمانڈ کےخلاف پہنچےدہلی ہائی کورٹ

7:41 - July 01, 2022
خبر کا کوڈ: 3512194
تہران ایکنا: محمد زبیر کی طرف سے پیش ہونے والے ایڈوکیٹ گروور نے پولیس کی درخواست کی مخالفت کرتے ہوئے الزام لگایا تھا کہ ایجنسی نے کسی اور معاملے میں پوچھ گچھ کے لیے زبیر کو بلایا تھا لیکن انھیں جلد بازی میں موجودہ کیس میں گرفتار کر لیا گیا۔

اردو اٹھارہ نیوز کے مطابق آلٹ نیوز کے شریک بانی محمد زبیر نے جمعرات کو دہلی ہائی کورٹ سے رجوع کیا جس میں ایک مبینہ قابل اعتراض ٹویٹ سے متعلق ایک کیس میں ان کے پولیس ریمانڈ کو چیلنج کیا گیا جس میں 2018 میں ایک ہندو دیوتا کے خلاف پوسٹ کیے جانے کا الزام عائد کیا گیا۔ مذکورہ عرضی کا تذکرہ ان کے وکیل ایڈوکیٹ ورندا گروور نے جسٹس سنجیو نرولا کے سامنے کیا، جنہوں نے جمعہ کو اس معاملے کی سماعت کے لیے رضامندی ظاہر کی۔ عرضی میں ٹرائل کورٹ کے 28 جون کو دہلی پولیس کو زبیر کی چار دن کی تحویل میں دینے کے حکم کو چیلنج کیا گیا ہے۔

زبیر کو دہلی پولیس نے 27 جون کو اپنے ایک ٹویٹ کے ذریعے مذہبی جذبات کو ٹھیس پہنچانے کے الزام میں گرفتار کیا تھا اور اسی دن ٹرائل کورٹ نے انھیں ایک دن کی پولیس حراست میں بھیج دیا تھا۔ ان کی ایک دن کی تحویل میں پوچھ گچھ کی میعاد ختم ہونے پر پیش کیے جانے کے بعد چیف میٹروپولیٹن مجسٹریٹ سنیگدھا سروری نے ان کی حراست میں مزید چار دن کی توسیع کر دی۔

اس ماہ کے شروع میں زبیر کے خلاف دفعہ تعزیرات ہند (IPC) کے تحت 153A (مذہب، نسل، مقام پیدائش، زبان وغیرہ کی بنیاد پر مختلف گروہوں کے درمیان دشمنی کو فروغ دینا) اور 295A (مذہبی جذبات کو مشتعل کرنے کے لیے جان بوجھ کر اور بدنیتی پر مبنی عمل) کے تحت مقدمہ درج کیا گیا تھا۔ پولیس نے کہا کہ یہ مقدمہ ایک ٹوئٹر صارف کی شکایت پر درج کیا گیا جس نے ان پر مذہبی جذبات کو ٹھیس پہنچانے کا الزام لگایا تھا۔

پولیس نے زبیر کی حراست میں پانچ دن کی توسیع کی درخواست کرتے ہوئے ٹرائل کورٹ کو بتایا تھا کہ ملزم مبینہ طور پر ایک ایسے ٹرینڈ کی پیروی کر رہا تھا جہاں اس نے مشہور ہونے کی کوشش میں مذہبی ٹوئٹس کا استعمال کیا تھا اور یہ کہ سماجی انتشار پیدا کرنے اور چوٹ پہنچانے کی دانستہ کوشش تھی۔ تفتیشی ایجنسی نے یہ بھی کہا تھا کہ ملزم تحقیقات میں شامل ہوا لیکن تعاون نہیں کیا اور اس کے فون سے مختلف مواد کو ڈیلیٹ کر دیا گیا۔

ملزم کی طرف سے پیش ہونے والے ایڈوکیٹ گروور نے پولیس کی درخواست کی مخالفت کرتے ہوئے الزام لگایا تھا کہ ایجنسی نے کسی اور معاملے میں پوچھ گچھ کے لیے زبیر کو بلایا تھا لیکن اسے جلد بازی میں موجودہ کیس میں گرفتار کر لیا گیا۔ کسی نے حال ہی میں زبیر کا 2018 کا ٹویٹ ری ٹویٹ کیا اور موجودہ مقدمہ درج کر دیا گیا۔ گمنام ٹویٹر ہینڈل پر اپنی پہلی ٹویٹ تھی، جس میں زبیر کی ٹویٹ کا حوالہ دیا گیا تھا۔

 

نام:
ایمیل:
* رایے:
* :