IQNA

12:57 - October 01, 2009
خبر کا کوڈ: 1832162
فن وثقافت گروپ: بيلجيئم پارليمنٹ كی ترك مسلمان خاتون ماہينوراوزدمير نے ۲۹ ستمبر كو مسلمان عورتوں كے اسلامی حجاب كے مقابلے میں يورپی ممالك كے غلط موقف پر نكتہ چينی كرتے ہوئے كہا ہے كہ اسلامی حجاب پر پابندی اہل يورپ كی كم فہمی اور عاقبت نا انديشی كانتيجہ ہے۔
بين الاقوامی قرآنی خبررساں ايجنسی "ايكنا" شعبہ تركی نے اخبار العالم سائٹ كے حوالے سے نقل كيا ہے كہ يورپی پارليمنٹ كی پہلی باحجاب خاتون اوزدمير نے اس پارليمنٹ میں آنے كے بعد اسلامی حجاب اختيار كرنے كی وجہ سے ہونے والے اہانتوں پر شديد نكتہ چينی كی ہے۔
اس ترك مسلمان خاتون نے كہا ہے كہ جب سے میں بيلجيئم كی پارليمنٹ كی ركن بنی ہوں اس وقت سے آج تك ميری بہت زيادہ اہانت كی گئی ہے۔
ماہينور اوزدمير نے مزيد كہا ہے كہ بيلجيئم اور اس ملك كی اخبارات كے علاوہ عالمی اخبارات نے بھی ميری اہانت كرنے میں كوئی دقيقہ فروگذاشت نہیں كيا ہے۔
انہوں نے آخر میں حجاب كے بارے میں يورپی موقف كی مذمت كرتے ہوئے كہا كہ يورپی لوگ فقط اس پردے كو ظاہری نگاہ سے ديكھتے ہیں اور اس میں پوشيدہ افكار اور صلاحيتوں سے چشم پوشی كرتے ہیں۔
472010

نام:
ایمیل:
* رایے:
* captcha: