IQNA

ایرانی مذاکرات کار پابندیوں کے خاتمے کے لیے دوحہ کا دورہ کر رھے ھیں۔

8:50 - June 29, 2022
خبر کا کوڈ: 3512182
2015 کے جوہری معاہدے کی بحالی اور تہران کے خلاف پابندیوں کے خاتمے کے لیے ہونے والی بات چیت میں ایران کے اہم مذاکرات کار مذاکرات کے نئے دور کے لیے منگل کو قطر پہنچے ھیں۔
ایکنا انٹرنیشنل ڈیسک کے مطابق ایرانی وزارت خارجہ کے ایک باخبر ذرائع نے ایرانی نیوز ایجنسی تسنیم کو بتایا کہ علی باقری کانی 28 جون بروز منگل دوحہ پہنچے ھیں تاکہ ایران مخالف پابندیوں کے خاتمے کے لیے مذاکرات دوبارہ شروع کر سکیں۔
 
ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان سعید خطیب زادہ نے پیر کے روز ایک پریس کانفرنس میں کہا تھا کہ پابندیوں کے خاتمے سے متعلق مذاکرات کا وقت اور مقام تقریباً طے پا گیا ہے، یہ بات نوٹ کرتے ہوئے کہ یہ مذاکرات اگلے دنوں میں خلیج فارس کے ایک ملک میں شروع ہوں گے۔
 
انہوں نے یہ بھی کہا تھا کہ یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کے سربراہ جوزپ بوریل کے حالیہ دورہ تہران کے دوران زیر بحث موضوعات میں سے ایک یہ تھا کہ امریکہ کو مشترکہ جامع منصوبہ بندی (JCPOA) کے تحت اپنے تمام وعدوں کا احترام کرنا چاہیے۔
 
میڈیا رپورٹس کے مطابق قطر، ایران اور امریکہ کے درمیان "بالواسطہ مذاکرات" کی میزبانی کرنے جا رہا ہے، کیونکہ ایران کے لیے امریکہ کے خصوصی ایلچی رابرٹ میلے کی آج دوحہ آمد متوقع ہے۔
 
یورپی یونین نے مذاکرات کو آسان بنانے اور مذاکرات میں تعطل کو توڑنے کے لیے کوششیں تیز کر دی ہیں جس کا مقصد JCPOA کو بچانا ہے۔
 
اپریل 2021 سے، ایران اور جے سی پی او اے کے باقی پانچ فریقوں - برطانیہ، فرانس، جرمنی، چین اور روس کے درمیان مذاکرات کے کئی دور آسٹریا کے دارالحکومت میں ہوئے ہیں تاکہ امریکہ کو ایران کے معاہدے میں واپس لایا جا سکے۔ تاہم، ویانا مذاکرات میں امریکی سفارت کاروں کو ان کے ملک کے معاہدے سے دستبردار ہونے کی وجہ سے خارج کر دیا گیا ہے۔

 

نام:
ایمیل:
* رایے:
* :