IQNA

13:28 - December 28, 2020
خبر کا کوڈ: 3508691
افغان صدر اشرف غنی کے افغان امن مذاکرات کو وطن منتقل کیے جانے کے حالیہ مطالبے کے باوجود طالبان اور افغان حکومت کے درمیان مذاکرات کا اگلا دور آئندہ ماہ سے قطر میں ہوگا۔

 

افغان صدر اشرف غنی کے افغان امن مذاکرات کو وطن منتقل کیے جانے کے حالیہ مطالبے کے باوجود طالبان اور افغان حکومت کے درمیان مذاکرات کا اگلا دور آئندہ ماہ سے قطر میں ہوگا۔

انہوں نے ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا کہ 'کونسل کی قائدانہ کمیٹی نے دوحہ میں بات چیت کرنے کا فیصلہ کیا ہے، اس سے قبل بہت سارے ممالک نے رضاکارانہ طور پر مذاکرات کی میزبانی کے لیے رضامندی ظاہر کی تھی تاہم کورونا وائرس کی وجہ سے انہوں نے اپنی پیش کش واپس لے لی'۔

 

ادھر امن عمل میں 'حوصلہ افزا پیش رفت' کے ساتھ ہی پاکستان نے افغانستان میں پائیدار امن کے لیے اپنے پختہ عزم کا اعادہ کیا اور دونوں فریقین سے 'الزام تراشی سے بچنے اور دانشمندی کا مظاہرہ کرنے' پر زور دیا۔

 

دوسری جانب افغان ایوان صدر نے ایک ٹوئٹ میں بیان دیا کہ صدر اشرف غنی اور قومی مفاہمتی کونسل کے سربراہ عبداللہ عبد اللہ نے اتوار کے روز ایک ملاقات کی۔

ان کا کہنا تھا کہ دونوں نے 'مذاکرات کے اگلے دور کے مقام پر تبادلہ خیال کیا' جس کے بعد اشرف غنی نے طالبان سے مذاکرات کے دوسرے مرحلے پر حکومت کی حمایت کا اعلان کیا۔

 

واضح رہے کہ دسمبر کے آغاز میں دونوں فریقین کے مذاکرات کاروں نے کئی ماہ کی مایوس کن ملاقاتوں کے بعد وقفہ لینے کا فیصلہ کیا تھا جو مذہبی تشریحات کے بنیادی ڈھانچے پر تنازعات تلے دبے ہوئی تھیں۔

 

پاکستان کا مؤقف

ادھر اسلام آباد میں دفتر خارجہ کے ترجمان نے ایک بیان میں کہا ہے 'جہاں افغان معاشرے اور بین الاقوامی برادری کی طرف سے پاکستان کی کوششوں کا اعتراف اور تعریف کی جارہی ہے وہیں ہمیں چند منفی تبصروں پر تشویش ہے جو افغانستان کے چند عہدیداروں اور غیر سرکاری حلقوں کی طرف سے سامنے آرہی ہیں'۔

 

 

انہوں نے کہا کہ پاکستان باہمی اتفاق رائے کے بنیادی اصول کہ سلامتی اور انٹیلیجنس امور سمیت تمام باہمی امور کو متعلقہ دوطرفہ فورمز اور چینلز کے ذریعے حل کیا جائے پر زور دیتا رہے گا۔

 

ترجمان نے کہا کہ امن و یکجہتی کے لیے افغانستان۔پاکستان ایکشن پلان کے متعلقہ ورکنگ گروپس اس طرح کی گفتگو کے لیے مناسب ادارہ جاتی فورم ہیں۔

 

ان کا کہنا تھا کہ جب مذاکرات نازک مرحلے میں داخل ہوتے ہیں تو بات چیت کرنے والے فریقین کے لیے یہ ضروری ہے کہ وہ الزام تراشی سے دور رہیں اور افغانستان میں دیرپا امن و استحکام کے حصول کے وسیع مقصد کے لیے دانشمندی کا مظاہرہ کریں۔

 

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ افغان حکومت کی داخلی سلامتی، امن و امان اور افغان جانوں کے تحفظ کے لیے اپنی ذمہ داری کو نبھانے کے لیے عملی اقدامات کرنے کی ضرورت کو واضح کرنا ضروری ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ 'پاکستان مؤثر ادارہ جاتی تعاون کے ذریعے سلامتی اور موثر بارڈر مینجمنٹ کے شعبے میں ہر ممکن تعاون کو بڑھانے کے لیے تیار ہے'۔

 

ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ دونوں ممالک کے درمیان حال ہی میں دوطرفہ تعلقات میں مثبت پیش رفت دیکھنے میں آئی ہے جس میں اہم دوطرفہ امور اور افغانستان-پاکستان ٹرانزٹ تجارتی معاہدے پر نظر ثانی شامل ہے۔

1150195

نام:
ایمیل:
* رایے:
* captcha: