IQNA

18:46 - July 20, 2021
خبر کا کوڈ: 3509850
تہران (ایکنا) بہمانی سلطنت جنوبی ہندوستان میں دکن کی ایک قدیم ترین مسلمان حکومتوں میں سے ایک تھی جس نے ان کے زیر اقتدار علاقوں کے ہر کونے اور کونے میں شاندار تاریخی یادگاریں چھوڑی ہیں۔

قومی  سیاست  نیوزکی  رپورٹ  کے  مطابق 

بہمانی سلطنت جنوبی ہندوستان میں دکن کی ایک قدیم ترین مسلمان حکومتوں میں سے ایک تھی جس نے ان کے زیر اقتدار علاقوں کے ہر کونے اور کونے میں شاندار تاریخی یادگاریں چھوڑی ہیں۔ اتفاقی طور پر ایک بار سن 1347 میں قائم ہونے والے حیدرآباد نواب میر عثمان علی خان کے آخری نظام تک اس حکومت کے تقریبا تمام علاقوں پر مسلم حکمرانی جاری رہی۔ روزنامہ سیاست اردو نے بہمانی سلطنت کی تاریخ کے بارے میں بتانے کےلئے محمد عبد القیوم( ڈپٹی ڈائریکٹر محکمہ آثار قدیمہ آندھراپردیش) کو مدعو کیا تھا۔

محمد عبد القیوم کے مطابق جنوبی ہندوستان میں اسلامی حکمرانی کی ابتداء اس وقت ہوئی جب علاءالدین خلجی نے دولت آباد قلعے پر قبضہ کرنے کے لئے دکن میں حملہ کیا تھا جو اس وقت دیوگری کے نام سے جانا جاتا تھا۔ بعد میں محمد تغلق نے دولت آباد کو اپنا دارالحکومت بنا لیا لیکن شمال میں سیاسی شورشوں کی وجہ سے انہیں دہلی واپس منتقل ہونا پڑا۔ علاءالدین بہمان شاہ دولت آباد میں پیچھے رہ گئے جرنیل میں سے ایک تھے جنہوں نے 1347 میں بہمنی سلطانی کی بنیاد رکھی جو 175 سال کی حکمرانی کے بعد پانچ سلطنتوں پر مشتمل تھا۔عبد القیوم نے بتایا کہ یہ سنہ 1526 کا سال تھا جب جنوبی ہند کے دکن میں بہمانی سلطانی کا سورج غروب ہوا تھا جبکہ شمال میں مغل سلطنت کا سورج طلوع ہورہا تھا۔بہمانی سلطنت کا خاتمہ پانچوں سلطانوں کے قیام کا باعث بنا ہے: 1. بیجاپور کے عادل شاہی ، 2) احمد نگر کے نظام شاہی ، 3) بیرار کے عماد شاہی ، 4) بیدر شاہی 5) گولکنڈہ کے قطب شاہی ۔

مغل شہنشاہ اورنگ زیب نے عادل شاہی اور قطب شاہی خاندان کے حکمرانوں کو شکست دے کر اپنے علاقوں کو مغل سلطنت میں ضم کردیا۔ لیکن آخری حکمرانی نواب میر عثمان علی خان کے زمانے تک دکن میں مسلم حکمرانی برقرار رہی جس نے بیجاپور اور بیرار کو چھوڑ کر بہمنی سلطنت کے تقریبا تمام اصل علاقوں پر حکمرانی کی۔ محکمہ آرکلوجی کے سابق ڈپٹی ڈائریکٹر نے بہمنی سلطانی اور بعد میں شاہی خاندانوں کے ذریعہ قائم کردہ گلبرگہ میں گرینڈ مسجد اور ساتویں مقبروں ، بیدر میں مدرسہ محمود گوان ، بیجا پور میں گول گمبز ، گولکونڈہ قلعہ اور چارمینار میں واقع شاندار یادگاروں کے بارے میں لمبی میں گفتگو کی۔محمد قیوم کے مطابق بہمنی سلطنت کو جنوبی ہندوستان میں بہت بڑے یادگاروں کی تعمیر میں اب تک نامعلوم ہند فارسی فن تعمیر کے تعارف کے لئے مشہور کیا گیا ہے۔عبد القیوم نے بتایا کہ بہمانی سلطانی اور بعد میں اس کے پانچ آف شور سلطانوں نے دکن کی تاریخ میں انمٹ نشان چھوڑے ہیں۔

 

نام:
ایمیل:
* رایے:
* captcha: