IQNA

9:20 - May 11, 2022
خبر کا کوڈ: 3511836
امریکی ویب سائٹ کا کہنا ہے کہ فوجی ٹیکنالوجی میں ایران کی پیشرفت نمایاں ہے۔

ایکنا انٹرنیشنل ڈیسک کے مطابق ایک امریکی ویب سائٹ نے ایرانی بحریہ میں زاگرس اور دماوند- 2  نامی دو مقامی اور دیسی ڈیسٹرائر جہازوں نزدیک ہی منظر عام پر آنے کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ حالیہ برسوں میں ایران نے فوجی ٹیکنالوجی کے میدان میں نمایاں ترقی کی ہے۔

ایرانی نیوز کی رپورٹ کے مطابق امریکی میگزین "ڈیفنس پوسٹ" نے اپنے تجزیہ میں لکھا کہ  دو مقامی تباہ کن بحری جہاز "زاگرس" اور "داماوند- 2" کی ایرانی تحریہ میں قریب الوقوع شمولیت کے بارے میں اسلامی جمہوریہ ایران کی بحریہ کے کمانڈر کے حالیہ بیان پر ردعمل ظاہر کیا ہے۔

اسلامی جمہوریہ ایران کی بحریہ کے کمانڈر ایڈمرل شہرام ایرانی نے حال ہی میں ایک ٹیلی ویژن پروگرام میں کہا تھا کہ زاگرس اور دماوند- 2 تباہ کن جہازوں کی تعمیر طے شدہ منصوبوں کے مطابق آگے بڑھی ہے اور انشاء اللہ انہیں جلد ہی لانچ کیا جائے گا۔

ڈیفنس پوسٹ نے رپورٹ کیا ہے کہ حالیہ برسوں میں ایران نے اپنی فوج کو خود کفیل بنانے کے لیے مقامی آلات اور ساز و سامانا کی تیاری میں نمایاں پیشرفت حاصل کی ہے۔

اسلامی جمہوریہ ایران کی بحریہ کے کمانڈر نے اس سلسلے میں واضح کیا کہ یہ دونوں ڈیسٹرائر ایک سرکاری تقریب میں اور ایک خاص موقع پر بحریہ کی آپریشنل باڈی میں شامل ہوں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ اس کی وجہ یہ ہے کہ ان کی مکمل جانچ ہونی چاہیے اور جمع کی جانے والی تکنیکی معلومات کو بحریہ کے تکنیکی اور صنعتی شعبے کو منتقل کیا جانا چاہیے تاکہ اسے جدید ترین ٹیکنالوجی کے مطابق اپ ڈیٹ کیا جا سکے۔

ڈیفنس پوسٹ نے اس کے بعد مقامی ٹیکنالوجی کے میدان میں ایران کی نمایاں پیشرفت کے بارے میں لکھا کہ ایران دماوند نوعیت کے تباہ کن طیاروں کے تجربے کے آخری مرحلے سے گزر رہا ہے جو ممکنہ طور پر جلد ہی اسلامی جمہوریہ ایران کی فوج کی بحریہ میں شامل ہو جائے گا۔ گزشتہ سال جون میں ایرانی بحریہ نے دنا ڈسٹرائر اور بارودی سرنگوں کا شکار کرنے والے شاہین کو بنانے میں کامیابی حاصل کی تھی۔

نام:
ایمیل:
* رایے:
* captcha: